مطلوبہ
معلومات جو انصاف کے کٹہرے میں لائے

محمد الجالانی (Muhammad al-Jawlani)

ایک کروڑ ڈالر تک

محمد الجالانی جسے ابو محمد الگولانی اور محمد الجولانی کے نام سے بھی جانا جاتا ہے النصراہ فرنٹ جو کہ القائدہ کی شام کی جماعت ہے کا سینئر رہنما ہے۔

اپریل 2013 میں الجالانی نے القائدہ اور اس کے رہنما ایمان الزواھری کا ساتھ دینے کا وعدہ کیا۔ جولائی 2016 میں الجالانی نے القائدہ اور الزواھری کی ایک آن لائن ویڈیو میں مدح سرائی کی اور یہ دعوی کیا کہ اے این ایف اپنا نام جابھت فاتھ الشام میں تبدیل کر رہا ہے۔

الجالانی کی زیرِ رہنمائی اے این ایف نے شام میں کئی دہشت گرد حملے کیے ہیں جن میں عام شہریوں کو نشانہ بنایا گیا۔ اپریل 2015 میں اے این ایف نے شام کی ایک چوکی سے تقریبا 300 کُرد شہریوں کو اغوا کیا اور بعد میں چھوڑ دیا۔ جُون 2015 میں اے این ایف نے ڈرُوز گاوں جو کہ شام کے اِڈلِب صوبے میں ہے 20 رہائشیوں کا قتلِ عام کیا۔

جنوری 2017 میں اے این ایف کئی دوسرےمذاحمت کرنے والے گروہوں کےساتھ مل گیا اور حیت تحریر السام قائم کی۔ شام میں اے این ایف القائدہ کے ساتھ ابھی بھی منسلک ہے۔ اگرچہ الجالانی ایچ ٹِی ایس کا رہنما نہیں ہے لیکن وہ اے این ایف کا ابھی بھی لیڈر ہے جو کہ ایچ ٹی ایس کے لیے گہری اہمیت کا حامل ہے۔

اے این ایف کو امیگریشن اور قومی قانون کے تحت ایک بیرونی دہشت گرد تنظیم اور خاص بین الاقوامی دہشت گرد جماعت EO 13224کے زیر قرار دیا گیا ہے۔یو این کی سیکیورٹی کونسل اور القائد پر پابندیاں عائد کرنے والی کمیٹی نے بھی اے این ایف کو اپنی فہرست میں شامل کر لیا ہے۔

الجالانی کو سٹیٹ ڈپارٹمنٹ نے صدارتی حُکم 13224 کے تحت ایک خاص بین الاقوامی دہشت گرد قرار دیا ہے۔ ۔یو این کی سیکیورٹی کونسل اور القائد پر پابندیاں عائد کرنے والی کمیٹی نے بھی اُسے اپنی فہرست میں شامل کر لیا ہے۔

ایک اور تصویر

Muhammad al-Jawlani English Poster
محمد الجالانی (Muhammad al-Jawlani)